پیٹرول کی قیمت میں کمی لانے کا آخری حل، پیٹرولیم مصنوعات پر عائد ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد (نیوز پاکستان) پیٹرول کی قیمت میں کمی لانے کا آخری حل، حکومت کا پیٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ۔ تفصیلات کے مطابق حکومت کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی لانے کیلئے اہم فیصلہ کیا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹس

کے مطابق حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ ہے۔رپورٹس کے مطابق حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس میں 5 فیصد تک کمی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سیلز ٹیکس کم کرنے سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بھی کمی ہوگی۔ دوسری جانب ای سی سی نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی منظوری دے دی ہے۔ اوگرا کی جانب سے وزارت خزانہ کو پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 14 روپے تک اضافے کی سمری بھیجی گئی تھی۔تاہم وزارت خزانہ نے پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 9

روپے تک کے اضافے کی منظوری دی ہے۔ مشیر خزانہ حفیظ شیخ کی سربراہی میں ہونے والے ای سی سی اجلاس کے دوران پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی منظوری دی گئی۔ پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 9 روپے، ڈیزل کی فی لیٹر 4.89روپے اضافے کی منظوری دی گئی ہے۔ پیٹرول کی نئی قیمت 108 روپے مقرر کر دی گئی ہے۔پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اطلاق وفاقی کابینہ کی منظوری کے بعد ہوگا۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے سے متعلق ماہرین اقتصادیات کا کہنا ہے کہ اس حالیہ اضافے سے ملک میں مہنگائی کی شرح میں مزید اضافہ ہوگا۔ خاص کر روزمرہ کے استعمال کی اشیاء کی قیمتوں میں اضافے دیکھنے میں آئے گا۔ دوسری جانب حکومت کا کہنا ہے کہ اوگرا جانب سے پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 14 روپے تک اضافے کی سفارش کی گئی تھی، تاہم عوام کو ریلیف دینے کیلئے پیٹرول کی قیمت میں 14 روپے کی بجائے 9 روپے کا اضافہ کیا گیا ہے۔حکومت عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی بڑھتی قیمت کے باعث پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرنے پر مجبور ہے۔ تاہم اس تمام صورتحال کے باوجود حکومت پیٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی کی مد میں عوام کو 5 ارب روپے تک کا ریلیف فراہم کرے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں